غزل ۔۔۔ دیوی ناگرانی

یوں اس کی بیوفائی کا مجھ کو گلا نہ تھا اک میں ہی تو نہیں جسے سب کچھ ملا نہ تھا   لپٹے ہوئے تھے جھوٹ سے، سچا نہ تھا کوئی کھوٹے تمام سکے تھے، اک بھی کھرا نہ تھا   اٹھتا چلا گیا میری سوچوں کا کارواں آکاش کی طرف کبھی، وہ یوں اڑا Read more about غزل ۔۔۔ دیوی ناگرانی[…]

غزلیں ۔۔۔ نجمہ ثاقب

  شہر کے آغاز میں دلدار قبروں کے نشاں روک لیتے ہیں مجھے ہر بار قبروں کے نشاں   کھردرے،تاریک، داغی پتھروں کے روپ میں چاند پر شاید ہیں ناہموار قبروں کے نشاں   اس پرانے گھر میں تیرا منتظر اب کون ہے ایک شاخ بے ثمر اور چار قبروں کے نشاں   میں سر Read more about غزلیں ۔۔۔ نجمہ ثاقب[…]

غزلیں ۔۔۔ پریتپال سنگھ بیتاب

جِس کی پرواز کو گگن درکار اُس پرندے کو کیا وطن درکار   درد احساس کی غذا ہے میاں خار درکار ہے چُبھن درکار   جوۓ شیر آج بھی نکل جائے اُس طرح کا ہے کوہ کن درکار   بس بہُت ہو گیا ہے اے صحرا سرو درکار ہے سمن درکار   ہیرے کیا کیا Read more about غزلیں ۔۔۔ پریتپال سنگھ بیتاب[…]

غزلیں ۔۔۔ نسرین سید

اس خاک میں ملاؤ، کوئی خاک مختلف تشکیل کو مری، ہو ذرا چاک مختلف   چرخ کہن ہٹاؤ، کہ درکار ہیں مجھے پرواز کے لیے کئی افلاک مختلف   کچھ اور ہی دکھایا مری عقل و فہم نے بابِ دروں کھلا، ہوا ادراک مختلف   عادی ہیں گو ستم کے یہ اہل وطن مگر اس Read more about غزلیں ۔۔۔ نسرین سید[…]

غزل ۔۔۔ سعود عثمانی

(استنبول میں لکھی گئی غزل مسلسل)   طلسمی گیت جیسا، ریشمی مہکار جیسا یہ منظر چار جانب دُودھیا دیوار جیسا   جھجکتا اور لب کرتا معطر بوسئہ تر یہ موسم اپنی نو خیزی میں پہلے پیار جیسا   نکھرتا آ رہا ہے نقرئی بلّور کوئی اترتا جا رہا ہے روح سے زنگار جیسا   زباں Read more about غزل ۔۔۔ سعود عثمانی[…]

غزل ۔۔۔ عرفان ستار

تُو کہ ہم سے ہے بصد ناز گریزاں جاناں ’’یاد کیا تجھ کو دلائیں ترا پیماں جاناں ’’   چل یہ مانا کہ تجھے یاد نہیں کچھ بھی۔ مگر یہ چمکتا ہوا کیا ہے سرِ مژگاں جاناں   آج قدموں تلے روندی ہے کلاہِ پندار آج وا مجھ پہ ہوا ہے درِ امکاں جاناں   Read more about غزل ۔۔۔ عرفان ستار[…]