مختصر نظمیں ۔۔۔ سلیم انصاری

زیاں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

یہ کیسا زیاں ہے

کہ اب

فصلِ گل میں پرندے

خود اپنے پروں کو کتر کے ہی

اپنے نشیمن بنانے پہ مجبور ہیں۔۔۔۔!

٭٭

 

 

 

 

شکست خوردہ نظم

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

جگنوؤں کے قتل میں ناکام ہو کر

جب وہ

اپنے ہاتھ میں خنجر لئے لوٹا

تو اس کے گھر کے سارے پھول

زخمی ہو چکے تھے

٭٭

 

 

 

ایک نظم خدا کے لئے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

مجھے تو اب بھی یقین ہے

کہ تو اب بھی

میری شہ رگ سے بھی نزدیک ہے

مگر یہ بھی سچ ہے

کہ دشمنوں نے آج

سب سے پہلے

میری شہ رگ ہی کاٹی ہے ۔۔۔۔

٭٭

 

 

فرق

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

پہلی عورت کے حکم کی اطاعت میں

پانچ فرمانبردار بیٹے

دوسری عورت کو

آپس میں بانٹ کر

کھا گئے

٭٭٭

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے