نظمیں ۔۔۔ مصحف اقبال توصیفی

 

نظمیں

 

مصحف اقبال توصیفی

 

کہی … اَن کہی

_____________________________________________

 

کچھ نہ کہنا بھی بہت کہنا ہے

لفظ سینے میں ہی رُک جائیں تو پھر بات کہاں ہوتی ہے

لیکن الفاظ کے اطراف جو … وہ

ایک چشمِ نگراں ہوتی ہے

 

اُسی چشمِ نگراں کے صدقے

آنکھ اگر خشک نظر آئے بہت روتی ہے

 

زندگی خواب ہے … تصویر تری سوتی ہے

خواب تھا … عالم بیداری تھا

تیری تصویر تھی یا تُو … تجھے کب دیکھا تھا

اب تو کچھ یاد نہیں آتا ہے صدیاں گزریں

ہاں … مگر یہ کہ تیرا نام لیے

خشک آنکھوں کے کنارے کئی ندیاں گزریں !!

٭٭٭

 

 

ڈپریشن

___________________________________________

 

ہرموسم اچھا ہوتا ہے

 

آج تو موسم کل سے بھی بہتر تھا

فون پہ جب ننھی نشو بولی ’’ننّو…ننّو… ہم کو ممی سے بھی اونچی

ہِیل کی چپل لے دو

وہ بولی ’’ہاں … ہاں گڑیا، میری گڑیا … ،پیاری گڑیا

میں آؤں گی تو لاؤں گی … ‘‘

 

آج وہ کتنی خوش ہے

باہر ہلکی دھوپ نکل آئی ہے

ہم دونوں اک اے۔ سی ریستوراں میں بیٹھے

اپنے بچوں کے بارے میں باتیں کرتے ہیں

وہ ہنستی ہے … اس کی خاطر میں بھی ہنستا ہوں

اور اچانک وہ میرے چہرے کے بدلے بدلے رنگوں کو پڑھ لیتی ہے

کہتی ہے’’ کیا … ٹھیک تو ہو، نا …؟‘‘

 

اور مجھے ایسا لگتا ہے

جیسے اک انجانی رسّی سے کوئی اندر ہی اندر

مجھ کو باندھ رہا ہو

یہ کم بخت مرے اندر کا موسم

جانے کب اچھّا ہو … !!

٭٭٭

 

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے