مختصر نظمیں ۔۔۔ سلیم انصاری

زیاں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔   یہ کیسا زیاں ہے کہ اب فصلِ گل میں پرندے خود اپنے پروں کو کتر کے ہی اپنے نشیمن بنانے پہ مجبور ہیں۔۔۔۔! ٭٭         شکست خوردہ نظم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔   جگنوؤں کے قتل میں ناکام ہو کر جب وہ اپنے ہاتھ میں خنجر لئے لوٹا تو اس کے گھر Read more about مختصر نظمیں ۔۔۔ سلیم انصاری[…]

یہاں بیٹھیں، رُکیں دم بھر ۔۔۔ ستیہ پال آنند

یہاں بیٹھیں، رُکیں دم بھر، ٹھہر کر سانس لیں سستائیں دو گھڑیاں کہ یہ لمحہ ، ہمارے ماضیِ مطلق سے حالِ پا گریزاں تک دبے پاؤں چلا آیا ہے اپنے ساتھ چپکے سے   یہاں بیٹھیں، ٹھہر کر سانس لیں، سستائیں دو گھڑیاں کہ اس سے پیشتر یہ لمحۂ موجود مستقبل کی جانب اک قدم Read more about یہاں بیٹھیں، رُکیں دم بھر ۔۔۔ ستیہ پال آنند[…]

نظمیں ۔۔۔ اسنیٰ بدر

                     عمارت بات کرتی ہے                    ___________________   عمارت بات کرتی ہے …. جلال الدین اکبر کے وسیع الشان اعلیٰ مقبرے پر جب میں پہنچی تو مجھے محسوس ہوتا تھا عمارت بات کرتی ہے کہیں گھوڑوں کی ٹاپیں اور سپہ سالار تلواریں فضا میں حوصلہ مندی کے پرچم اونچی میناریں جلال الدین اکبر تخت Read more about نظمیں ۔۔۔ اسنیٰ بدر[…]

نظمیں ۔۔۔ عارفہ شہزاد

  تشنگی کی قسم! ­____________________________   یہاں دن رات کے عنصر کی یکجائی کہاں دشوار ہے بس ذائقے ترتیب دیتے ہاتھ میری دسترس میں ہوں ہوا کے پر لگاؤں آسمانوں کے افق چھو لوں ستارے ٹانک دوں چاہوں جہاں سارے میں پھیلوں چاندنی بن کر بھروں مٹھی میں سورج اور آنچل کو دھنک سے رنگ Read more about نظمیں ۔۔۔ عارفہ شہزاد[…]

نظمیں ۔۔ سلمیٰ جیلانی

  پگڈنڈی کا سفر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔   کہیں بل کھاتی اور کہیں سیدھی یہ پگڈنڈی کہیں دور سفر کو جاتی ہے دو راہی ساتھ ہو لیتے ہیں پھر راستے بنتے جاتے ہیں قوس و قزح میں مدغم سارے رنگ الگ الگ پھیلتے ہیں آنکھوں میں امید کی جوت جگا کر پھر سمٹ جاتے ہیں ہمسفر منزل Read more about نظمیں ۔۔ سلمیٰ جیلانی[…]

دو نظمیں ۔۔۔ سلیم انصاری

سفر ۔۔ بے چہرگی کا ­____________________________     میرے مالک تازہ سفر کی کون سی یہ منزل ہے جہاں پر میری بیٹی کی آنکھوں میں خواب نہیں اندیشے ہیں میرے بیٹے کے لفظوں میں مستقبل کی دھندلی دھندلی تصویریں ہیں میری بیوی کے چہرے پر مجھ سے بچھڑ جانے کا خوف چمکتا ہے میری نظر Read more about دو نظمیں ۔۔۔ سلیم انصاری[…]

ایک نظم جو لکھی نہیں جا سکتی ۔۔۔ انجلاء ہمیش

تم خاموش خدا خاموش در و دیوار خاموش یہ بستی جو کبھی زمیں بوس ہو گئی تب آثارِ قدیمہ کے ماہرین کسی بھی ذرّے سے ہماری محبت کا سراغ نہ پا سکیں گی چلو یہ کامیابی تو تمہارے حصے میں آئی مجھے تم نے دکھا دیا کہ قلب کے سناٹے کیسے ہوتے ہیں چیخیں جو Read more about ایک نظم جو لکھی نہیں جا سکتی ۔۔۔ انجلاء ہمیش[…]

دو نظمیں ۔۔۔ مصحف اقبال توصیفی

ایک نظم __________________   (؎ اور تسبیح روز و شب کا دانہ دانہ پھرتا تھا)   رات تھی۔ اندھیرا تھا اپنے خواب سے اُٹھ کر میں نے ایک در کھولا اور میں نے کیا دیکھا؟ دور۔ جو مکاں ہے وہ ہاں۔ یہی مکاں ہے وہ جس میں، میں نہیں رہتا اور مجھے نظر آئے اس Read more about دو نظمیں ۔۔۔ مصحف اقبال توصیفی[…]

رات ۔۔۔ قیصر شہزاد ساقیؔ

ماں! وہ کالی رات جس کے بعد سویرا نہ ہوا۔۔ ۔۔ جس کے نقش یادوں کے پارہ پارہ وجود سے آج تک نہ مٹ پائے اس رات تقدیر تاریکی کے پیراہن میں تیرے سرہانے کھڑی تھی میں خاموش تماشائی مصلحت کی عینک سے ان ہاتھوں کو جنھوں نے ہزاروں خواہشوں لاکھوں آرزوؤں پر مٹی ڈالی Read more about رات ۔۔۔ قیصر شہزاد ساقیؔ[…]