دو گز زمین ۔۔۔ طارق مرزا

لِز کو مرے ہوئے پورے دو ماہ ہو گئے ہیں لیکن اس کی لاش ابھی تک بے گور و کفن ہے۔ اسپتال والے کہتے ہیں اگر کسی نے لاش کو دفنانے کا بندوبست نہیں کیا تو مجبوراً اسے جلانا پڑے گا۔ لیکن اس کے لئے بھی دفنانے کی نسبت کم سہی، رقم تو درکار ہے۔ Read more about دو گز زمین ۔۔۔ طارق مرزا[…]

آدم خور ۔۔۔ خورشید حیات

کہانی تو ہم سب کے اندر سمندر کی لہروں کی طرح ابھرتی ڈوبتی رہتی ہے۔ سمندر میں میں ہوں۔ مجھ میں سمندر۔ بارش کی بوندیں سمندر میں۔ اور سمندر بارش کی بوندوں میں۔ مجھے قریب سے دیکھو۔ پہچانو! ابھرتی ڈوبتی لہریں تم سے کیا کہہ رہی ہیں؟ آدمی۔! سانپ سے بھی زہریلا آدمی!! آدمی۔ ہرے Read more about آدم خور ۔۔۔ خورشید حیات[…]

سانجھی خوشیاں سانجھے غم ۔۔۔ شائستہ فاخری

اسے معلوم تھا کہ اس کی تحریر میں ایسا کچھ نہیں ہے جو گھر کے نظام کو درہم برہم کر دے۔ شوہر کو کسی پریشانی میں ڈال دے یا پھر وہ خود کسی آفت میں گرفتار ہو جائے۔ پھر بھی اس کے اوپر ایک انجانا خوف مسلط تھا۔ اس کے پیر کپکپا رہے تھے، انگلیاں Read more about سانجھی خوشیاں سانجھے غم ۔۔۔ شائستہ فاخری[…]

برف میں آگ ۔۔۔ شموئل احمد

سلیمان کو اپنی بیوی کسی جز دان میں لپٹے ہوئے مذہبی صحیفے کی طرح لگتی تھی جسے ہاتھ لگاتے وقت احتیاط کی ضرورت ہوتی ہے۔ اس کی شادی کو دس سال ہو گئے تھے لیکن وہ اب بھی سلیمان سے بہت کھلی نہیں تھی۔ سلیمان اس کو پاس بلاتا تو پہلے ادھر ادھر جھانک کر Read more about برف میں آگ ۔۔۔ شموئل احمد[…]

آخری خواہش ۔۔۔ نجمہ ثاقب

خادم کو گانا گانے کی عادت تھی۔ مگر خالی خولی عادت سے کہاں کام چلتا ہے۔ گلے میں اگر سر نہ ہو۔ آواز کی لہروں میں محض سیٹیاں بجاتی ہوا بھری ہو تو گانا الٹا گانے والے کے گلے پڑ جاتا ہے۔ مگر خادم کو قدرت نے ایسی آواز بخشی تھی کہ جو ایک مرتبہ Read more about آخری خواہش ۔۔۔ نجمہ ثاقب[…]

گرہ کشائی ۔۔۔ صالحہ رشید

’’ذیشان بیٹے۔۔۔ جلدی کیجئے۔۔۔ لیٹ ہو جائیں گے آپ‘‘ ’’رحیم چاچا۔۔‘‘ ’’جی۔۔۔ سلام بیگم صاحبہ‘‘ ’’گاڑی نکالئے‘‘ ثروت بیگم کی آواز پر رحیم چاچا نے جلدی سے کار کی چابی سنبھالی اور ایک بار پھر۔۔۔ ’’جی بیگم صاحبہ‘‘ کہتے ہوئے صدر دروازے کی طرف ہو لئے۔ ثروت بیگم نے ذیشان کی ٹائی ٹھیک کی۔ سر Read more about گرہ کشائی ۔۔۔ صالحہ رشید[…]

پانچ قبریں ۔۔۔ عامر صدّیقی

آج بھی مجھے اچنبھے میں دیکھ کر وہ بوڑھا بول ہی پڑا، ’’یہ پانچ قبریں میرے پانچ دوستوں کی ہیں۔ ان پانچوں کا مجھ پر جو احسان ہے وہ میں کبھی نہیں اتار سکتا، ایسا احسان بھلا کب کسی نے، کسی کے ساتھ کیا۔ اب میرا فرض ہے کہ میں روز ان کی قبروں پر Read more about پانچ قبریں ۔۔۔ عامر صدّیقی[…]

رائیگانی ۔۔۔ نجیبہ عارف

سہ پہر کا وقت تھا اور میں گھر میں اکیلی تھی۔ اچانک گھنٹی بجی۔ میں نے سیڑھیاں اتر کر دروازہ کھولا تو وہ سامنے کھڑی تھی۔ ناٹا قد، چھوٹا سا خوب صورت چہرہ، غیر ملکیوں کا سا۔ اس نے گہرے نیلے رنگ کا سکرٹ پہن رکھا تھا اور سفید چھوٹی قمیض۔ سر پر سیاہ سکارف Read more about رائیگانی ۔۔۔ نجیبہ عارف[…]

جیلر ۔۔۔ توصیف بریلوی

جیلر بہت عجیب تھا۔ ہوتا بھی کیوں نہ…نو عمری میں ہی عہدہ جو سنبھال لیا تھا۔ اس کی جیل میں ہندو مسلم ہر مذہب و ملت کے قیدی تھے۔ جیل میں اتنے نہاں تہ خانے تھے کہ کب کون سا قیدی آیا اور کب کون گیا کسی کو خبر نہیں ہوتی تھی بلکہ کسی قیدی Read more about جیلر ۔۔۔ توصیف بریلوی[…]

چودھویں رات کا چاند ۔۔۔ محمد عظیم الدین

چودھویں کی رات تھی اور آسمان پر چمکتا ہوا چاند اسے دیکھ رہا تھا اور وہ زمین سے چاند کو۔ اس کے لیے یہ منظر نیا نہیں تھا لیکن چاند کے لیے شاید یہ منظر کچھ عجیب بھی تھا اور نیا بھی۔ اب سے پہلے چاند ہر مہینے کی چودھویں رات کو چار چمکتی آنکھیں Read more about چودھویں رات کا چاند ۔۔۔ محمد عظیم الدین[…]