اکتوبر 3, 2013

تازہ شمارہ

مجھے کہنا ہے کچھ ۔۔۔۔۔

چھ ماہ بعد آپ سے بات کر رہا ہوں۔ جنوری میں ہندوستان میں شہریت ترمیمی بل کے پاس ہونے کی وجہ سے جو غم و غصہ تھا، اس کا اظہار اداریے کے اس صفحے کو سیاہ کر دینے کے ارادے سے تکمیل کو پہنچا۔ اپریل کے شمارے کے وقت کورونا وائرس کی تباہیاں شروع ہو Read more about مجھے کہنا ہے کچھ ۔۔۔۔۔[...]

لا موجود الا اللہ ۔۔۔ مدحت الاختر

  مری ہستی عدم انباز لا موجود الا اللہ سراسر پردۂ غماز لا موجود الا اللہ   ہزاروں شعبدے حرف و نوا کی دسترس میں ہیں کروں کیسے سخن آغاز لا موجود الا اللہ   مجھے تعمیر کرنے اور بسانے والا کوئی ایک ہزاروں خانہ بر انداز لا موجود الا اللہ   زمین و آسمان Read more about لا موجود الا اللہ ۔۔۔ مدحت الاختر[...]

مجتبیٰ حسین: ایک الوداعی تحریر ۔۔۔ ڈاکٹر غلام شبیر رانا

  قومی اخبارات کے مطالعہ سے معلوم ہوا کہ حیدر آباد دکن (بھارت) میں مقیم اُردو زبان کے مایۂ ناز ادیب اور مزاح نگار مجتبیٰ حسین چوراسی برس کی عمر میں انتقال کر گئے۔ انسانیت کے وقار اور سر بلندی کے لئے انتھک جد و جہد کرنے والے اس ادیب کی رحلت پر ہر آنکھ Read more about مجتبیٰ حسین: ایک الوداعی تحریر ۔۔۔ ڈاکٹر غلام شبیر رانا[...]

پتے جو لاپتہ ہو گئے۔۔۔۔ مجتبیٰ حسین

  ہمارے پاس ایک ڈائری ہے جو 1980 سے 2000 ء تک ہمارے زیر استعمال رہی۔۔ 1980ء میں جب ہم اپنے پہلے بیرونی سفر پر جاپان جانے لگے تو ہم نے اس میں اپنے بعض اہم ہندوستانی احباب کے پتے اس خیال سے لکھ لئے تھے کہ جاپان کے لمبے قیام کے دوران میں کہیں Read more about پتے جو لاپتہ ہو گئے۔۔۔۔ مجتبیٰ حسین[...]

الف سے الہ آباد، امرود اور اکبر الہ آبادی ۔۔۔ مجتبیٰ حسین

(ہم جس شہر میں بھی جاتے ہیں اگر وہاں ذرا سی بھی فرصت میسر آ جائے تو اس شہر میں بیٹھ کر خود اسی شہر کے بارے میں ضرور کچھ نہ کچھ لکھتے ہیں۔۔ پچیس برس پہلے جب ہمیں پہلی بار الہ آباد جانے کا موقع ملا تو ایک صبح گنگا، جمنا اور سرسوتی کے Read more about الف سے الہ آباد، امرود اور اکبر الہ آبادی ۔۔۔ مجتبیٰ حسین[...]

اقبال متین ۔۔۔ مجتبیٰ حسین

  ہم نہیں جانتے کہ آپ میں سے کتنوں کو اس بات کا علم ہے بھی یا نہیں کہ پچھلے ہفتہ دکن کے مایہ ناز افسانہ نگار اقبال متین کو اتر پردیش اردو اکیڈمی نے مولانا ابو الکلام آزاد سے منسوب اپنے سب سے بڑے قومی اعزاز (مالیتی پانچ لاکھ روپئے) سے نوازنے کا اعلان Read more about اقبال متین ۔۔۔ مجتبیٰ حسین[...]

مشتاق احمد یوسفی۔۔۔۔ مجتبیٰ حسین

بات پر سنجیدگی سے غور کرتے رہتے ہیں کہ اردو کے بیشتر سرکردہ مزاح نگار اور طنز نگار جو اپنی تحریروں میں نہایت چوکس، زیرک، مستعد، چالاک، ہوشیار، باخبر بلکہ سفاک تک نظر آتے ہیں، وہ اپنی عملی زندگی میں اتنے ہی سادہ لوح، بے لوث، شریف، نیک، مخلص، بے نیاز، بے ریا بلکہ معصوم Read more about مشتاق احمد یوسفی۔۔۔۔ مجتبیٰ حسین[...]

غزلیں ۔۔۔۔ گلزار دہلوی

  بٹھا کے دل میں گرایا گیا نظر سے مجھے دکھایا طرفہ تماشہ بلا کے گھر سے مجھے   نظر جھکا کے اٹھائی تھی جیسے پہلی بار پھر ایک بار تو دیکھو اسی نظر سے مجھے   ہمیشہ بچ کے چلا ہوں میں عام راہوں سے ہٹا سکا نہ کوئی میری رہ گزر سے مجھے Read more about غزلیں ۔۔۔۔ گلزار دہلوی[...]

آصف فرخی۔۔۔۔ ڈاکٹر شمیم حنفی

  (تشکر: اوراقِ سبز) آصف سے میری ملاقاتوں اور مراسم کا سلسلہ 82 -1981 کی ایک خاموش سہ پہر کو شروع ہوا۔۔ گرمیاں رخصت ہو رہی تھیں۔۔ فضا میں ہلکی نمی تھی۔۔ دلی میں سردیوں کی آمد سے پہلے موسم بہت سہانا ہو جاتا ہے۔۔ اُس روز شاید خنکی کچھ زیادہ تھی۔۔ جامعہ نگر کا Read more about آصف فرخی۔۔۔۔ ڈاکٹر شمیم حنفی[...]

خالی مکان میں رہ جانے والے۔۔۔۔ آصف فرخی

  وہ دیکھیے، اُدھر اس طرف … … .. سیدھے ہاتھ کو تین چار مکانوں کے فوراً بعد … … .. نظر آیا آپ کو؟ کوئی نہ کوئی وہاں سے گزرتے ہوئے اس کی طرف اشارہ کر کے اس کی بات ضرور کرتا ہے۔۔ پہلے پہلے وہ مکان نظر اس لئے نہیں آتا تھا کہ Read more about خالی مکان میں رہ جانے والے۔۔۔۔ آصف فرخی[...]

سمندر کی چوری۔۔۔۔ آصف فرخی

ابھی وقت تھا۔۔ پانی اور آسمان کے بیچ میں روشنی کی وہ پہلی، کچی پکی، تھرتھراتی ہوئی کرن پھوٹنے بھی نہ پائی تھی کہ شہر والوں نے دیکھا سمندر چوری ہو چکا ہے۔۔ دن نکلا تھا نہ سمندر کے کنارے شہر نے جاگنا شروع کیا تھا۔۔ رات کا اندھیرا پوری طرح سمٹا بھی نہیں تھا Read more about سمندر کی چوری۔۔۔۔ آصف فرخی[...]

الوداع اسرار جامعی۔۔۔۔ صفدر امام قادری

ادھر کئی برسوں سے اس خبر کے لیے ہم سب تیّار تھے۔۔ اسرار جامعی کی کسمپرسی اور بے بسی دیکھنا آسان نہیں تھا۔۔ محفلوں کو قہقہہ زار بنانے والا وقت کے ہاتھوں اس طرح طالبِ رحم بن کر تماشائے اہلِ کرم دیکھتا ہوا ملے گا، یہ سب کے لیے صبر آزما تھا۔۔ وہ ایک طویل Read more about الوداع اسرار جامعی۔۔۔۔ صفدر امام قادری[...]

غزل پیمائی۔۔۔۔ اسرار جامعی

شاعری کا گرم سارے ملک میں بازار ہے جس کو دیکھو وہ قلم کاغذ لئےتیار ہے   تیز بیکاری کی جتنی آج کل رفتار ہے بس اسی درجہ فزوں غزلوں کی پیدا وار ہے   ہر گلی کوچے میں ہے شعری نششتوں کی دکاں ذہن کو بیمار رکھنے کا یہ کاروبار ہے   مبتدی استاد Read more about غزل پیمائی۔۔۔۔ اسرار جامعی[...]

بجلی ہوئی فیل۔۔۔۔ اسرار جامعی

لو! وقت ہوا رات کا آوارہ! ندارد بجلی ابھی آئی تھی ابھی واہ! ندارد اس تیرگی میں ہوش ہے واللہ ندارد اسرار اندھیرے میں جو ہے جھیلنا وہ جھیل بجلی ہوئی پھر روزِ گذشتہ کی طرح فیل غائب ہوئی بجلی تو ہوئی فکر کی لَو تیز لوگوں نے اسی وقت کیا طنز کو مہمیز تم Read more about بجلی ہوئی فیل۔۔۔۔ اسرار جامعی[...]

دلّی درشن۔۔۔۔ اسرار جامعی

دلی نئی پرانی دیکھی خیر و شر حیرانی دیکھی کرسی کی سلطانی دیکھی دھوتی پر شیروانی دیکھی بن راجہ کے راج کو دیکھا بھارت کے سرتاج کو دیکھا منتری مہراج کو دیکھا الٹے سیدھے کاج کو دیکھا کرسی ہے اب تخت کے بدلے نرمی ہے اب سخت کے بدلے سالم ہے اب لخت کے بدلے Read more about دلّی درشن۔۔۔۔ اسرار جامعی[...]

آنسو سچ بولتے ہیں؟۔۔۔۔ احمد زین الدین

گاؤں کی ایک شدید تپتی ہوئی دوپہر کا ذکر ہے۔۔ میں برسوں بعد سرحد پار اپنے آبائی گاؤں کے نیم پختہ مکان کی ڈیوڑھی کے باہری دروازے پر کھڑا کھانے کے بعد جوٹھے ہاتھ دھو رہا تھا اور میری نظریں ان چوزوں پر جم گئی تھیں جو سیلی زمین پر گرے ہوئے دال چاول کے Read more about آنسو سچ بولتے ہیں؟۔۔۔۔ احمد زین الدین[...]

غزلیں ۔۔۔ طالب جوہری

اُس کا ہر انداز سجیلا بانکا تھا کچھ تو بتاؤ وہ خوش پوش کہاں کا تھا ایک طرف سے کھلی ہوئی تھی شیر کی راہ لیکن اس پر تین طرف سے ہانکا تھا مت گھبرانا دوست، غبارِ ناقہ سے ہم نے بھی اس دھول کو برسوں پھانکا تھا اُس کے گھر سے نکل کر ہم Read more about غزلیں ۔۔۔ طالب جوہری[...]

غزلیں۔۔۔۔ محمد خالد

کھل گیا نہ ہو کسی اور طرف باب مرا کہیں آوارۂ غربت ہی نہ ہو خواب مرا خطہ خاک میں کچھ خاک پہ تہمت میری سر افلاک کوئی خیمۂ ماہتاب مرا دل آوارہ کہیں چشم کہیں خواب کہیں کیسا بکھرا در آفاق پہ اسباب مرا خواہش جاں بھی لرز جاتی ہے ہر اشک کے ساتھ Read more about غزلیں۔۔۔۔ محمد خالد[...]

اپنے دُکھ مجھے دے دو ۔۔۔ راجندر سنگھ بیدی

اندو نے پہلی بار ایک نظر اوپر دیکھتے ہوئے پھر آنکھیں بند کر لیں اور صرف اتنا سا کہا۔ ’’جی‘‘ اسے خود اپنی آواز کسی پاتال سے آئی ہوئی سنائی دی۔ دیر تک کچھ ایسا ہی ہوتا رہا اور پھر ہولے ہولے بات چل نکلی۔ اب جو چلی سو چلی۔ وہ تھمنے ہی میں نہ Read more about اپنے دُکھ مجھے دے دو ۔۔۔ راجندر سنگھ بیدی[...]

جنگلی بوٹی۔۔۔۔ امرتا پریتم

انگوری میرے پڑوسیوں کے پڑوسیوں کے گھر، ان کے بڑے پرانے نوکر کی بالکل نئی بیوی ہے۔ نئی اس معنی میں کہ وہ اپنے شوہر کی دوسری بیوی ہے، سو اس کا پتی دو ہاجو ہوا۔ جون کا مطلب اگر جون ہو تو اس کا مطلب ہوا دوسری جون میں جانے والا آدمی، یعنی دوسری Read more about جنگلی بوٹی۔۔۔۔ امرتا پریتم[...]

نہیں، رحمن بابو۔۔۔۔۔ جوگندر پال

( ۱) نہیں رحمن بابو، تم خوامخواہ تعجب کر رہے ہو؟ میرے بھی تو ایک کی بجائے دو سر ہیں۔۔۔ کیسے؟۔۔۔۔ ایسے بابو، کہ اپنے ایک سر سے میں کچھ اچھا سوچتا ہوں اور ایک سے کچھ بُرا۔۔۔ ہاں اسی لئے کچھ اچھا ہوں، کچھ بُرا۔ ہر ایک کے ساتھ یہی تو ہوتا ہے۔۔۔۔نہیں، تم Read more about نہیں، رحمن بابو۔۔۔۔۔ جوگندر پال[...]

ایک ناگوار کہانی۔۔۔۔ احمد ہمیش

ہماری دنیا کے ایک شہر میں ذاکر اور کسی دوسرے شہر میں مذکور رہا کرتا تھا۔۔ ذاکر کے شہر کی راہ سے مذکور کے شہر کی راہ اور فاصلہ نامعلوم تھا۔۔ پھر بھی واقعہ کچھ یوں ہوا کہ ذاکر اپنے کرایہ کی رہائش کے ایک کمرہ میں بستر پر تھا۔۔ اس طرح کہ نہ سو Read more about ایک ناگوار کہانی۔۔۔۔ احمد ہمیش[...]

قرۃ العین حیدر کا افسانہ "نظارہ درمیاں ہے” فکری و فنی تناظر میں۔۔۔۔ ڈاکٹر حامد اشرف

افسانہ نظارہ درمیاں ہے ۔۔۔۔ قرۃ العین حیدر تارا بائی کی آنکھیں تاروں کی ایسی روشن ہیں اور وہ گرد و پیش کی ہر چیز کو حیرت سے تکتی ہے۔۔ در اصل تارا بائی کے چہرے پر آنکھیں ہی آنکھیں ہیں۔۔ وہ قحط کی سوکھی ماری لڑکی ہے۔۔ جسے بیگم الماس خورشید عالم کے ہاں Read more about قرۃ العین حیدر کا افسانہ "نظارہ درمیاں ہے” فکری و فنی تناظر میں۔۔۔۔ ڈاکٹر حامد اشرف[...]

مہالکشمی کا پُل ٠۔۔۔ محمد بشیر مالیرکوٹوی

  افسانہ: مہالکشمی کا پُل۔۔۔۔ کرشن چندر مہا لکشمی، اسٹیشن کے اس پار مہالکشمی جی کا ایک مندر ہے۔۔ اسے لوگ ریس کورس بھی کہتے ہیں۔۔ اس مندر میں پو جا کرنے والے لوگ ہارتے زیادہ ہیں جیتتے کم ہیں۔۔ مہالکشمی اسٹیشن کے اس پار ایک بہت بڑی بدرو ہے جو انسانی جسموں کی غلاظت Read more about مہالکشمی کا پُل ٠۔۔۔ محمد بشیر مالیرکوٹوی[...]

اِدھر اُدھر ۔۔ ایک تجزیہ ۔۔۔۔ بیگ احساس

اِدھر اُدھر۔۔۔۔ حمید سہروردی   اُس کی ٹیبل پر کاغذات بے ترتیب پڑ ے ہوئے تھے۔ کچھ کتابیں کُھلی ہوئی تھیں اور کچھ اِدھر اُدھر رکھی ہوئی تھیں۔ اس کے سر کے اوپر ٹیوب لائٹ اپنی زندگی جی رہا تھا۔ کہا جائے تو غلط نہ ہو گا کہ اس کے لئے زندگی کے انکشافات کرنے Read more about اِدھر اُدھر ۔۔ ایک تجزیہ ۔۔۔۔ بیگ احساس[...]

منٹو کے افسانے ’سبز سینڈل‘ کا تجزیہ ۔۔۔ عمار نعیمی

  افسانہ سبز سیڈل۔۔۔۔ سعادت حسن منٹو   ’’آپ سے اب میرا نباہ بہت مشکل ہے۔۔۔۔ مجھے طلاق دے دیجیے۔‘‘ ’’لاحول و لا کیسی باتیں منہ سے نکال رہی ہو۔۔۔۔ تم میں سب سے بڑا عیب ایک یہی ہے کہ وقتاً فوقتاً تم پر ایسے دورے پڑتے ہیں کہ ہوش و حواس کھو دیتی ہو۔‘‘ Read more about منٹو کے افسانے ’سبز سینڈل‘ کا تجزیہ ۔۔۔ عمار نعیمی[...]

برائے کہانی :ایک ناگزیر فتویٰ ۔۔۔ احمد ہمیش

  آج کہانی وسعتِ موضوع کی اُس نہج پر آ پہنچی ہے کہ اب اُس کے سامنے ایک پورا نظامِ وسعت ہے مگر اس میں لے جانے والا کہانی کار ہی اس کبریائی کا اکابر ہو گا۔ جب کہ وہ بیشتر کہانی کار جو ایک عمر گزار کے بہ وجوہ ایک مثالی کہانی خلق نہ Read more about برائے کہانی :ایک ناگزیر فتویٰ ۔۔۔ احمد ہمیش[...]

سید اشرف کی انفرادیت ۔۔۔ حُسین الحق

  عمر کے جس حصے میں پہنچ چکا ہوں وہاں خزاں کی ڈراؤنی چاپ سنائی دینے لگتی ہے، ایسے میں اگر ’’باغ کا دروازہ‘‘ نظر آ جائے تو خوش ہونا فطری ہے اور اگر باغ کے دروازے پر بادِ صبا کا انتظار کرتا کوئی پری پیکر بھی نظر آ جائے تو پھر تو دوبارہ جینے Read more about سید اشرف کی انفرادیت ۔۔۔ حُسین الحق[...]

مردہ خانے میں عورت۔۔۔۔ مشرف عالم ذوقی

(ناول کا ایک باب) یہاں کوئی ایسا نہیں جو یقین کے ساتھ یہ کہہ سکتا ہو کہ ہم زندہ ہیں …. مار شہوت را بکش در ابتدا ورنہ اینک گشت مارت اژدہا (خواہش کے سانپ کو ابتدا میں ہی مار دو ورنہ دیر ہونے پر ازدہا قابو سے باہر ہو جائے گا) – مولانا روم Read more about مردہ خانے میں عورت۔۔۔۔ مشرف عالم ذوقی[...]

کنگ آئی چی ۔۔۔ لو شان/ عامر صدیقی

لسین میں واقع شراب کی دوکانیں، چین کے دیگر علاقوں جیسی نہیں ہوتی ہیں۔ ان سب میں مخصوص آہنی کاؤنٹر موجود ہیں، جن کا داخلی دروازہ گلی کی طرف ہوتا ہے، ان پر شراب گرم کرنے کیلئے گرم پانی رکھا جاتا ہے۔ دوپہر میں کام سے فراغت پا جانے کے بعد شام کو لوگ ایک Read more about کنگ آئی چی ۔۔۔ لو شان/ عامر صدیقی[...]

پہلی بیوی ۔۔۔ ڈاکٹر صادقہ نواب سحرؔ

اِس بار بارشیں دسمبر تک چلیں۔۔ بارش ختم ہوتے ہی اچانک موسم ٹھنڈا ہو گیا۔۔ صبح ساڑھے گیارہ بجے میں نے کالج چھوڑا۔۔ گھر کے راستے میں پکّی سڑک سے نیچے اُترتی ایک چھوٹی سی سیڑھی سے اتر کر تنگ گلی سے ہوتی ہوئی،میں اپنے گھر کی جانب مڑی۔۔ ’آج گھر جلدی جا کر جھاڑ Read more about پہلی بیوی ۔۔۔ ڈاکٹر صادقہ نواب سحرؔ[...]

گل بوزا اور باقی چھ ۔۔۔ مشرف عالم ذوقی

How many are you, then,” said I, "If they two are in heaven?” Quick was the little Maid’s reply "O Master! we are seven.” "But they are dead; those two are dead! Their spirits are in heaven!” ‘Twas throwing words away; for still The little Maid would have her will, And said, "Nay, we are Read more about گل بوزا اور باقی چھ ۔۔۔ مشرف عالم ذوقی[...]

چل گوئیاں سنگ بیٹھیں ۔۔۔ ڈاکٹر شائستہ فاخری

دن ڈھل رہا تھا اور درختوں پر آ کر رین بسیرا کرنے والے پرندوں کا شور مجھے دور سے سنائی دے رہا تھا۔۔ ڈوبتے سورج کی سرخ روشنی میں سیاہی مائل رنگ آہستہ آہستہ گھلنے لگا تھا۔۔ فضا کا شور میرے اندر کے مہیب سناٹے کو دور کرنے میں ناکام تھا۔۔ میں اس وقت بالکنی Read more about چل گوئیاں سنگ بیٹھیں ۔۔۔ ڈاکٹر شائستہ فاخری[...]

کھوکھلی کگر ۔۔۔ احمد رشید

’’زندگی میں کبھی کبھی ایسے پل بھی آتے ہیں کہ انسان بے حقیقت پریشان ہو جاتا ہے۔ ‘‘ وہ خود کلام ہوتا ہے اور سوچتا ہے یہ کیسی رات ہے جو اضطراب میں ڈوبی ہوئی ہے۔۔ آلامِ روزگار، نہ غمِ عشق ہے۔۔ آلامِ روزگار ہے نہیں کہ جینے کا مقصد دنیا نہیں اس لیے کبھی Read more about کھوکھلی کگر ۔۔۔ احمد رشید[...]

لیموں کا رس ۔۔۔ خاور چودھری

برفیلی رُت نے ہر شے کو ڈھانپ رکھا تھا۔۔ کوہستانوں پر ایستادہ برف کی چٹانیں اگرچہ معمول کے مطابق تھیں لیکن وادی اور شہری علاقوں میں سردی کی شدت پہلے کبھی اتنی نہ تھی۔۔ اب تو درختوں کی ٹہنیاں بلوریں معلوم ہوتی تھیں اور تو اور ہوا بھی برف کا لبادہ اوڑھ کر سفر کرتی Read more about لیموں کا رس ۔۔۔ خاور چودھری[...]

وصیت ۔۔۔ دیوی ناگرانی

چھت اور مکان گھر نہیں ہوتے، ان میں ضرورت ہے ان دریچوں کی جہاں سے آتی جاتی تازہ ہوا تن من کو چھو لے، اور صرف اپنے لمس سے ہی سہلا کر زندہ ہونے کا احساس جگا دے۔۔ کبھی ایسی ہوائیں بھی ہوتی ہیں، جو بے رخی اور دھار دار ہوتی ہیں، تن من کو Read more about وصیت ۔۔۔ دیوی ناگرانی[...]

وبا کے دور کے چار افسانے ۔۔۔ محمد جمیل اختر

وَبا میں ڈوبتا منظر   وہ ایک فوٹو گرافر تھا، شہر شہر، قریہ قریہ گھوم کر قدرتی مناظر کو اپنے کیمرے میں محفوظ کرنا اُس کا من پسند مشغلہ تھا۔۔ اُسے بچپن ہی سے قدرتی مناظر سے عشق تھا، بارش ہوتی تو قطروں کی جلترنگ کو گھنٹوں سنتا رہتا جیسے یہ کوئی دلفریب ساز ہو، Read more about وبا کے دور کے چار افسانے ۔۔۔ محمد جمیل اختر[...]

ایش ٹرے ۔۔۔ توصیف بریلوی

  جِم (Jim) نے آخری بار ایک لمبی سانس چھوڑی اور اسٹیلا (Stella) کے برابر میں ہی ڈھیر ہو گیا۔۔ دونوں کافی دیر تک چھت کو دیکھتے رہے۔۔ سانسوں کی بازگشت دھیمی ہوئی۔۔ اسٹیلانے اپنا نازک ہاتھ جم کے پیٹ پر پھیرتے ہوئے کہا، ’’دس سال پہلے جب ہم ٹین(Teen) تھے تب تمہارے Six Pack Read more about ایش ٹرے ۔۔۔ توصیف بریلوی[...]

زرقا الیمامہ۔۔۔ غلام ابن سلطان

بابا فتح خان اور اس کی اہلیہ باختر کا شمار اقلیم معرفت کے پُر اسرار افراد میں ہوتا تھا۔۔ یہ صابر و شاکر میاں بیوی سب کے لیے فیض رساں تھے اور ہر کسی کی خیر مانگتے تھے۔۔ قادر مطلق نے اِنھیں مستقبل کے بارے میں پیش بینی کی معجز نما صلاحیت ودیعت کی تھی۔۔ Read more about زرقا الیمامہ۔۔۔ غلام ابن سلطان[...]

خالی ڈبے ۔۔۔ فرحانہ صادق

اچھے ماموں سے میرا رشتہ سگے ماموں بھانجی کا نہ تھا۔کبھی چھٹپن میں امی نے انہیں اپنا بھائی بنایا اور مرتے دم تک اس رشتے کو نبھاتی رہیں۔ اگلے زمانے میں منہ بولے رشتوں کی بھی حرمت ہوا کرتی تھی اب تو خیر سگے رشتوں کی بھی نہ رہی۔ اس منہ بولے رشتے کے علاوہ Read more about خالی ڈبے ۔۔۔ فرحانہ صادق[...]

دو افسانے ۔۔۔ عمار نعیمی

تنقید نہیں اصلاح السلام علیکم دوستو! اس خاکسار کو لوگ الحاج چودھری محمد نعمت اللہ آنسو کے نام سے جانتے ہیں۔۔ یوں تو خاکسار کا ذاتی پرنٹنگ پریس کا کام ہے لیکن ادب و سخن سے محبت ادبی حلقوں تک کھینچ کر لے آئی۔۔ آج یہاں خاکسار کی اپنی پہچان ہے۔۔ میں چاہتا ہوں کہ Read more about دو افسانے ۔۔۔ عمار نعیمی[...]

رمنی ۔۔۔ اسلم آزاد شمسی

آج طویل مدت کے بعد رمنی ملی، مجھے دیکھ کر مسکرائی تو میں بھی مسکرائے بغیر رہ نہ سکا، وہ کافی دنوں بعد اپنے گھر سے میکے آئی تھی۔۔ میں اس کے قریب گیا اور پوچھا ’رمنی! کیا سسرال میں اتنا من لگتا ہے جو تو اتنے دنوں بعد آئی ہے؟ کیا تجھے اپنی بوڑھی Read more about رمنی ۔۔۔ اسلم آزاد شمسی[...]

پریم لتا ۔۔۔ وفا نقوی

پنکھے پر لٹکی ہوئی لاش اور ٹیبل پر رکھے سوسائڈ نوٹ نے اسپیکٹر اودھیش کمار پانڈے کے سامنے ساری کہانی بیان کر دی تھی۔ سوسائڈ نوٹ میں لکھا ہوا تھا۔ میں پریم لتا۔ میری موت کا ذمے دار کوئی ایک شخص نہیں بلکہ پورا سماج ہے۔ خاص طور سے میرے پتی پرمیشور جمنا پرشاد شرما Read more about پریم لتا ۔۔۔ وفا نقوی[...]

ایک چپ سی کہانی۔۔۔۔ محسن خان

شانتی ہمیشہ کی طرح سج دھج کر نکلی اور شام اپنے اڈّے پر پہنچ گئی … یہ بس اسٹاپ اس کی زندگی کی گاڑی چلانے میں بڑا مدد گار تھا بس دوست تھا … . وہ یہاں کھڑی ہو کر گاہکوں کو ڈھونڈنے لگتی … لیکن بہت دیر ہونے کے بعد جب کچھ نظر نہیں Read more about ایک چپ سی کہانی۔۔۔۔ محسن خان[...]

خاکی ابلیس۔۔۔۔ عبداللہ خان

گٹر کا گندا، بدبو دار، گہرے مٹیالے کا پانی، چہار سُو رواں دواں تھا۔ ، چہار سُو رواں دواں تھا۔۔ ہر کوئی اپنا دامن بچاتا ہوا، کبھی یہاں، تو کبھی وہاں، چھلانگیں لگاتا ہوا چلا جا رہا تھا۔۔ کچھ سمجھ نہیں آتا تھا کہ شہر کے بلدیاتی نظام کو کسی کی نظر لگ گئی تھی Read more about خاکی ابلیس۔۔۔۔ عبداللہ خان[...]

ماں ۔۔۔ عبد الباسط احسان

ماں کی گود کتنا مضبوط قلعہ ہوتی ہے، وہ جگہ جہاں حالات کی بد نما گردش ٹھہر سی جاتی ہے۔۔ اس کے تصور میں ماں کا چہرہ تھا، دل کر رہا تھا، کہ وہ اپنی ماں کے پاس واپس چلا جائے، اس ملک میں واپس چلا جائے، جہاں بھوک تو ہے مگر ماں بھی ہے۔۔۔ Read more about ماں ۔۔۔ عبد الباسط احسان[...]

نا خدا۔۔۔۔ محمد شاہد محمود گادھری

وہ مجھ سے اکثر کہا کرتی تھی کہ میں خدا ہوں اور پھر خدا کو خدا ثابت کرنے کے لئے ایک طویل سا سانس کھینچ کر تقریر کے انداز میں شروع ہو جاتی۔۔۔۔ ’’دیکھو تمہارے مطابق خدا نے انسان کو اپنا نائب بنانا پسند کیا، مطلب انسان میں ہر وہ خوبی ہے جو خدا میں Read more about نا خدا۔۔۔۔ محمد شاہد محمود گادھری[...]

انتہائے کمال سے گوشۂ جمال تک ۔۔۔ ڈاکٹر قرۃ العین طاہرہ

سفر نامہ عمرہ ۲۰۱۶ء، پہلی قسط       فارعہ فارد محمود کے نام     ’’اور اللہ کی خوشنودی کے لیے جب حج و عمرہ کی نیت کرو تو اسے پورا کرو۔‘‘ (البقرہ: ۱۹۶)   اللہ اور اس کے رسول کی خوشنودی یقیناً بنیادی سبب۔۔۔ ثواب کی تمنا کہیں، روح کی طلب کا نام Read more about انتہائے کمال سے گوشۂ جمال تک ۔۔۔ ڈاکٹر قرۃ العین طاہرہ[...]

عجلت میں چھپا مجموعہ ۔۔۔ محسن خان

نام کتاب: وہ کون تھی (افسانے اور خاکے) مرتب: علیم صبا نویدی مبصر : محسن خان                 علیم صبا نویدی دنیائے ادب میں کسی تعارف کے محتاج نہیں ہے۔ ان کا اہم تحقیقی کارنامہ ’’تامل ناڈو میں اردو‘‘ جو دو ضخیم جلدوں، دوہزار چھ سو صفحات پر مشتمل ہے۔ اس منفرد تحقیقی Read more about عجلت میں چھپا مجموعہ ۔۔۔ محسن خان[...]