اکتوبر 3, 2013

تازہ شمارہ

مجھے کہنا ہے کچھ……

بہت سی امیدوں کے ساتھ نئے سال کا پہلا شمارہ حاضر ہے، اس دعا کے ساتھ کہ یہ سال ہر قسم کی وبا اور خوف و ہراس کا خاتمہ ثابت ہو، اور پوری دنیا میں امن و سکون قائم ہو جائے، آمین۔ اس سہ ماہی کی وفیات میں ڈاکٹر ابرار احمد جیسے اہم نظم گو Read more about مجھے کہنا ہے کچھ……[...]

نعت شریف ۔۔۔ الیاس بابر اعوان

دھُوپ بھی سایہِ دیوار نظر آتی ہے نسبتِ احمدِ مختار، نظر آتی ہے   آپ کا فیض بدل دیتا ہے ترتیب و صفات اونٹنی اونٹوں کی سردار نظر آتی ہے   اُن کو معلوم نہیں نقشِ کفِ پا کا جلو زندگی جن کو بھی دُشوار نظر آتی ہے   اِنہماک ایسا تھا سرکار کے روضے Read more about نعت شریف ۔۔۔ الیاس بابر اعوان[...]

اردو زبان کی ابتداء اور اس کی ارتقا ۔۔۔ نا معلوم

مولوی فیروز الدین کی مرتب کردہ مشہور زمانہ اردو لغت ’’جامع فیروز اللغات‘‘ میں اردو زبان کی ابتداء اور اس کی ارتقا کے حوالے سے ایک سیر حاصل مقالہ شامل ہے۔ افسوس اس بات کا ہے کہ یہ اہم ترین مقالہ کسی مصنف/ محقق کے نام کے بغیر شائع ہوا ہے۔ گمان اغلب ہے کہ Read more about اردو زبان کی ابتداء اور اس کی ارتقا ۔۔۔ نا معلوم[...]

سیرِ لکھنؤ ۔۔۔ عبد الرحمن بجنوری

لکھنؤ میں جہاں اور چیزیں قابل دید ہیں، چند تصویریں بھی ہیں۔ تصویریں کیا ہیں گویا شاہان و وزیران اودھ کی تاریخ کے چند اوراق ہیں جو زمانے کے دست برد سے بچ رہے ہیں، یا یوں کہیے کہ اس کارواں کے نقش پا ہیں جو اودھ کی خاک پاک سے آج نصف صدی گذری Read more about سیرِ لکھنؤ ۔۔۔ عبد الرحمن بجنوری[...]

درد کہاں جاتے ہیں مائے؟ ۔۔۔ ثاقب ندیم

خبر سنی تو دل میں آنے والا پہلا خیال افتخار بخاری صاحب کا یہ مصرعہ تھا۔ درد کا احساس ہی نہیں ہو رہا بس ایک چپ سی لگ گئی ہے۔ سوال جنم لے رہے ہیں، وہ محبت جو کہیں سوئی رہتی تھی، جاگ اٹھی ہے پوری آنکھیں کھول کے۔ ہم بات کرتے تھے کانوں میں Read more about درد کہاں جاتے ہیں مائے؟ ۔۔۔ ثاقب ندیم[...]

ابرار احمد سے دس سوالات ۔۔۔ تصنیف حیدر

ابرار احمد  نظم بھی بہت اچھی لکھتے ہیں اور غزل بھی۔ ان کی ایک نظم پر مجھے یاد ہے کہ حاشیہ پر زور دار مکالمہ قائم ہوا تھا۔میں نے اس سے بھی بہت پہلے ان کی شاعری پڑھی تھی، اور ہمیشہ پسند کی۔ان کے یہاں شاعری ایک بہترین رومانی لہجہ اوڑھے ہوئے دکھائی دیتی ہے۔ان Read more about ابرار احمد سے دس سوالات ۔۔۔ تصنیف حیدر[...]

موہوم کی مہک تلاشتا ڈاکٹر ابرار احمد ۔۔۔ پروین طاہر

ڈاکٹر ابرار سے میری بالمشافہ دو ہی ملاقاتیں ہیں ایک دفعہ اس کے کلینک میں دس پندرہ منٹ کی ملاقات اور ایک دفعہ عنبرین صلاح الدین کی کتاب کے فنکشن میں ہم دونوں نے اس کی کتاب پر مضمون پڑھا تھا مگر اُس سے ملاقات اور تعلق کی دوسری صورتیں بھی رہی ہیں جو بالمشافہ Read more about موہوم کی مہک تلاشتا ڈاکٹر ابرار احمد ۔۔۔ پروین طاہر[...]

موہوم کی مہک (ابرار احمد) ۔۔۔ عارفہ شہزاد

ابرار احمد کی شاعری کی بنیادی خوبی کیمرے کی سی وہ تکنیک ہے جو اس کی شاعری کو تمثال کاری کا شاہکار بنا دیتی ہے۔ ایک ہی نظم میں منظر در منظر نئے سے نیا پہلو حواس پر منکشف ہوتا چلا جاتا ہے۔ اکثر اوقات ہر نیا مصرع نیا منظر بنتا ہے۔ اس کے ہاں Read more about موہوم کی مہک (ابرار احمد) ۔۔۔ عارفہ شہزاد[...]

نظم کے نئے معمار: ابرار احمد ۔۔۔ محرک: زیف سید

فیس بک کے حاشیہ ادبی گروہ کے آن لائن مباحثے کا سکرپٹ     نظم کے نئے معمار کا چوتھا اجلاس پیشِ خدمت ہے۔ اس اجلاس کے لیے جناب ابرار احمد کی نظم سیر بین منتخب کی گئی ہے جو شب خون شمارہ ۲۹۳ تا ۲۹۹ میں شائع ہوئی تھی۔ اس کی صدارت جناب جاوید Read more about نظم کے نئے معمار: ابرار احمد ۔۔۔ محرک: زیف سید[...]

نظمیں ۔۔۔ ابرار احمد

  داستان __________________     قبروں پر دیے بجھ گئے ہیں اور درختوں میں ستارے ٹوٹ رہے ہیں بوسیدہ کواڑوں پر خاموشی دستک دیتی ہے اداسی اور محبت سے بوجھل ہوا سیٹیاں بجاتی زمانوں سے گذر رہی ہے کیلنڈر سے سال دنوں کی طرح اتر رہے ہیں آنگنوں میں چارپائیاں اوندھی پڑی ہیں اور چولھوں Read more about نظمیں ۔۔۔ ابرار احمد[...]

غزلیں ۔۔۔ ابرار احمد

اور کیا رہ گیا ہے ہونے کو ایک آنسو نہیں ہے رونے کو   خواب اچھے رہیں گے ان دیکھے خاک اچھی رہے گی سونے کو   یہ مہ و سال چند باقی ہیں اور کچھ بھی نہیں ہے کھونے کو   نارسائی کا رنج لائے ہیں تیرے دل میں کہیں سمونے کو   چشم Read more about غزلیں ۔۔۔ ابرار احمد[...]

یہی سچ ہے ۔۔۔ منو بھنڈاری/ اعجاز عبید

منو بھنڈاری کی یہ کہانی بہت مشہور ہوئی تھی، اور اسی کہانی کی بنیاد بنا کر ۱۹۷۴ء کی فلم ’رجنی گندھا‘ بنائی گئی تھی۔ اس فلم کے ہدایت کار تھے باسو چٹرجی، اور فلم کے اداکار تھے امول پالیکر، ودیا سنہا اور دنیش ٹھاکر۔ اس فلم نے ۱۹۷۵ء کا بہترین فلم کا فلم فئر اوارڈ Read more about یہی سچ ہے ۔۔۔ منو بھنڈاری/ اعجاز عبید[...]

سیانی بوا ۔۔۔ منو بھنڈاری/ اعجاز عبید

سب پر جیسے بوا جی کی شخصیت حاوی ہے۔ سارا کام وہاں اتنے منظم طریقے سے ہوتا جیسے سب مشینیں ہوں، جو قاعدے میں بندھیں، بنا رکاوٹ اپنا کام کئے چلی جا رہی ہیں۔ ٹھیک پانچ بجے سب لوگ اٹھ جاتے، پھر ایک گھنٹہ باہر میدان میں ٹہلنا ہوتا، اس کے بعد چائے دودھ ہوتا۔ Read more about سیانی بوا ۔۔۔ منو بھنڈاری/ اعجاز عبید[...]

نظمیں ۔۔۔۔ مصحف اقبال توصیفی

  خاک زاد __________________   کسی سے کچھ نہیں لیا کسی کو کچھ نہیں دیا تو جیسے خالی ہاتھ آئے تھے، چلے گئے تمام عمر ایک رہگذر بس ایک موڑ پر نہ جانے کس کے انتظار میں کھڑے رہے   عجیب خواہشیں کوئی طلسم۔ ایسی سیمیا کریں یہ اپنی خاک۔ اس کی مانگ میں مہ Read more about نظمیں ۔۔۔۔ مصحف اقبال توصیفی[...]

گرے ایریا (Gray Area) ۔۔۔ مجید اختر

وہ جو ہمیں دھوکہ دیتے ہیں کوئی جواز تو رکھتے ہوں گے اپنے من میں کھوٹ چھپائے ہم انجان سے بن جاتے ہیں وہ بھی سچے، ہم بھی برحق اپنے تئیں ہم سب سچے ہیں، خالص بھی ہیں گرد ہمارے جتنے سنگی، ساتھی ہیں یا رشتہ دار، محلّہ والے، مولوی، مُلّا، سَنت، پروہت سب سچے Read more about گرے ایریا (Gray Area) ۔۔۔ مجید اختر[...]

عشق کرنے کا مزہ ہی کچھ ہے ۔۔۔ انور شمیم

(گلزار کے لیے ایک نظم)   سہل ہوتے ہوئے، پنہاں، وہ عیاں ہے جتنا کرۂ ارض و سماں گھیرتا ہے اور نقطے میں سمٹتا ہے تو کھو جاتا ہے اپنی ہی کاہکشاں وسعت میں خوب صورت کہ جو آنکھوں کو بھلی لگتی ہے جیسے وہ خواب ہمارے ہوں میاں! خوب صورت سی زمیں آسماں تاروں Read more about عشق کرنے کا مزہ ہی کچھ ہے ۔۔۔ انور شمیم[...]

پتہ وہی ہے ۔۔۔ اسنیٰ بدر

فون آیا ہے۔۔ ۔ میرے بھائی نے بچپن والا گھر تڑوا کے نئے سرے سے آنگن کمرے بنوائے ہیں باورچی خانے میں پتھر لگوائے ہیں طاق پرانے بھروائے ہیں سب دروازے بدلائے ہیں   جامن، نیم کا پیڑ کاٹ کر نئے قیمتی چکنے گملے منگوائے ہیں ننھے پودے اگ آئے ہیں۔۔ ۔   ابٓی، آپ Read more about پتہ وہی ہے ۔۔۔ اسنیٰ بدر[...]

نظمیں ۔۔۔ تنویر قاضی

  رات کی پہنائی میں گِرتی ہوئی ایک اور رات _________________________________   راتوں میں اک رات ڈھونڈتے خود بھی ہو جاتے ہیں رات بھیگے بال و پر کے ساتھ سپید کبوتر اُوپر اُڑتے کالے ہرن کو دے نہیں سکتے مات دیکھ نہ پائے منقاروں پر چُبھتی چھِلتر جنت کے اشجار کی اتنے مہین لکھے تھے Read more about نظمیں ۔۔۔ تنویر قاضی[...]

نظمیں ۔۔۔ فرزانہ نیناں

کھیل __________________     کائی ہری تھی، ہری رہی کہیں اندر ہی اندر میں برسوں نڈھال رہی پہلے تو صرف اپنی دھڑکن سنی تھی میں نے بجلی چمک گئی تو اک راہ جگمگائی اور دور سے کسی کی آواز مجھے سنائی جوں ہی قریب پہنچی جانے کہاں وہ کھوئی نہ پاس آئی میرے اور نہ Read more about نظمیں ۔۔۔ فرزانہ نیناں[...]

ہوا کے لئے ایک نظم ۔۔۔۔ سلیم انصاری

ہوا خوشبوئیں اپنے دامن میں بھر کے ہر اک سمت یوں بانٹتی پھر رہی ہے کہ جیسے یہ مامور اسی کام پر ہو مگر۔ اس سے پوچھو بجھایا ہت کتنے چراغوں کو اس نے بکھیرا ہے کتنے گلوں کو زمیں پر اجاڑے ہیں کتنے نشیمن پرندوں کے اس نے گرائے ہیں کتنے درختوں سے پتّے Read more about ہوا کے لئے ایک نظم ۔۔۔۔ سلیم انصاری[...]

نیرو کا روم ۔۔۔ وشنو ناگر/ اسنیٰ بدر

(ہندی)   جب روم جل رہا تھا نیرو کے ہاتھ میں تھی اک بانسری سریلی   میں نے بھی تان دی تھی، ’’کیا بات میرے آقا!‘‘   جب روم جل رہا تھا   نیرو جلا رہا  تھا چُن کر غریب رومن جسموں کی مشعلوں سے کرتا تھا شہر روشن آہ و فغاں  بھلا کر اور Read more about نیرو کا روم ۔۔۔ وشنو ناگر/ اسنیٰ بدر[...]

نظمیں ۔۔۔ سنیل گنگوپادھیائے / اعجاز عبید

(بنگلا)   صرف نظم کے لیے ___________________   صرف نظم کے لیے ہوا یہ جنم صرف نظم کے لیے ہوئے کچھ کھیل   صرف نظم کے لیے تمہارے چہرے پر شانتی کی ایک جھلک صرف نظم کے لیے تم عورت ہو   صرف نظم کے لیے زیادہ زیادہ بڑھتا خون کا دباؤ صرف نظم کے Read more about نظمیں ۔۔۔ سنیل گنگوپادھیائے / اعجاز عبید[...]

نظمیں ۔۔۔ آساوری کاکڑے / اعجاز عبید

(مراٹھی)   دکھ ہوتا ہے سیانا ___________________   جب دہکتا رہتا ہے اندر باہر دکھ طوفان کا روپ دھارے ہوا بن کر آتا ہے   تھرتھرانے لگتی ہے اندر کی روشنی اس اندھیرے میں جب تب دکھ لالٹین کا شیشہ بن کر آتا ہے   کتنا بھی چوکنے رہیے جب طے ہوتا ہے دھرتی پر Read more about نظمیں ۔۔۔ آساوری کاکڑے / اعجاز عبید[...]

نظمیں ۔۔۔ شنکھ گھوش / اعجاز عبید

(بنگلا)   بادل جیسا آدمی ___________________   میرے سامنے سے ٹہلتے ہوئے جاتا ہے وہ ایک بادل جیسا آدمی اس کے جسم کے اندر داخل کرنے پر معلوم پڑتا ہے کہ سارا پانی دھرتی پر جھڑ جائے گا۔   میرے سامنے سے ٹہلتے ہوئے جاتا ہے وہ ایک بادل جیسا آدمی اس کے سامنے جا Read more about نظمیں ۔۔۔ شنکھ گھوش / اعجاز عبید[...]

نظمیں ۔۔۔ کالپیٹا نارائنن / اعجاز عبید

(ملیالم)   مجرم ___________________   مجرموں کا جرم ثابت کرنا بہت آسان ہوتا ہے ایک حد سے آگے وہ کچھ بھی چھپا نہیں سکتے   جس راز کو وہ چھپا رہے ہوتے ہیں اس کے ہی ارد گرد گھومتے رہتے ہیں ان کے جھوٹ… تھوڑے بہت مختلف ہوں گے ان کے بیان لیکن آخر میں Read more about نظمیں ۔۔۔ کالپیٹا نارائنن / اعجاز عبید[...]

نظمیںٕ ۔۔۔۔ سریش جوشی / اعجاز عبید

(گجراتی)   تمہارا اندھیرا ___________________   آج میں تمہارے اندھیرے سے بات کروں گا تمہارے ہونٹ کی نرم پنکھڑیوں کے بیچ کا ہلکا نرم اندھیرا اور گھنی زلفوں کا معطر اندھیرا   تمہارے رخسار پر ابھرے تل میں اندھیرے کا فل سٹاپ تمہاری نسوں کے جنگل میں چھپے اندھیرے کو میں مست سیار کی ہنکار Read more about نظمیںٕ ۔۔۔۔ سریش جوشی / اعجاز عبید[...]

نظمیں ۔۔۔ آغا شاہد علی / اعجاز عبید

(کشمیری)   اردو سیکھتے ہوئے ___________________   جموں کے پاس کے ایک ضلعے سے آیا تھا وہ (اس کی اردو میں ڈوگری لڑکھڑا رہی تھی) انیس سو سینتالیس میں ایک بر صغیر کے دو حصوں میں ٹوٹنے کا شکار اس نے بتایا ٹکڑوں میں تقسیم ہَوا کھانے کے بارے میں جب کہ لوگ لہو کے Read more about نظمیں ۔۔۔ آغا شاہد علی / اعجاز عبید[...]

آنکھوں میں بُنے سپنے ۔۔۔ شوکت حسین شورو / عامر صدیقی

(سندھی)   ریک سے کتاب نکالتے، دیکھتے اور واپس رکھتے ہوئے کنول نے محسوس کیا کہ کسی کی آنکھیں، اس کو لگاتار گھور رہی ہیں۔ اس نے ایک دو بار آڑھی ترچھی نظروں سے اس شخص کی طرف دیکھا اور کترا گئی۔ لیکن شخص تھا جو پتھر بنا کھڑا تھا۔ کنول کتاب دیکھ رہی تھی Read more about آنکھوں میں بُنے سپنے ۔۔۔ شوکت حسین شورو / عامر صدیقی[...]

مبینہ یا سکینہ ۔۔۔ گربخش سنگھ / اعجاز عبید

  (پنجابی)   گاؤں کے اکلوتے پکے مکان کے پچھواڑے سے ایک مرد اور عورت چوروں کی طرح آگے پیچھے دیکھتے ہوئے نکلے۔ سامنے سورج ڈھل رہا تھا۔ اس کی سیدھی کرنیں ان کے منہ پر پڑ رہی تھیں۔ مرد دیکھنے میں جوان اور طاقتور تھا، عورت حسین اور دبلی پر دونوں کے چہروں پر Read more about مبینہ یا سکینہ ۔۔۔ گربخش سنگھ / اعجاز عبید[...]

فٹ بال ۔۔۔ پدما سچدیو / عامر صدیقی

  (ڈوگری)     کوئی دس برس ہوئے ہوں گے۔ جب میرا تبادلہ سرینگر ہوا تھا۔ جموں کے اسکولوں میں موسمِ گرما کی تعطیلات چل رہی تھیں۔ میری بیوی اور میرے دونوں بیٹے بھی، میرے ساتھ ہی سرینگر آئے ہوئے تھے۔ انہی دنوں میرے بیٹے کی، جو کہ چھٹی جماعت کا طالب علم تھا، سالگرہ Read more about فٹ بال ۔۔۔ پدما سچدیو / عامر صدیقی[...]

چھوئی موئی ۔۔۔ آنڈال پریہ درشنی/ اعجاز عبید

’’انو، دادی کو ہاتھ مت لگانا‘‘ بچی کی پیٹھ پر پڑی دھول پدماوتی کے تن میں گہرائی سے اتر گئی۔ ’’کمبخت کتنی بار کہا ہے، دادی کے قریب مت جاؤ، انہیں مت چھوؤ، ان کے اوپر مت لیٹو، کھوپڑی میں کچھ جائے تب نا! ضد ۔۔۔۔ ضد، تین سال کی ہے مگر ضد تو دیکھو۔‘‘ Read more about چھوئی موئی ۔۔۔ آنڈال پریہ درشنی/ اعجاز عبید[...]

چلو بھر پانی، چلو بھر خون ۔۔۔ نا۔ گا۔ گورے/ اعجاز عبید

(مراٹھی)   آسمان میں کہیں چھوٹا سا بادل بھی نظر نہیں آ رہا تھا۔ اوپر سے جیسے آگ برس رہی تھی۔ باہر پیلی، نم دھوپ تھی۔ ہماری گاڑی دھیمی رفتار سے الہ آباد کی طرف بڑھ رہی تھی جیسے مکھی گڑ کی بھیلی پر رینگتی ہے۔ گاڑی میں کھچاکھچ بھیڑ تھی اور اگر کوئی ٹائیلیٹ Read more about چلو بھر پانی، چلو بھر خون ۔۔۔ نا۔ گا۔ گورے/ اعجاز عبید[...]

اسمعیل شیخ کی تلاش میں ۔۔۔ ہومین برگوہاتری/ اعجاز عبید

(اسمیا(آسامی))   میں شاید زمان و مکاں سب کچھ بھول کر شہر کے مصروف ترین راج پتھ کے بیچوں بیچ کھڑا آس پاس کے لوگوں کو اچرج میں ڈال کر جسم کی پوری قوت کے ساتھ پکار اٹھا تھا — ’اسمعیل!‘ پکار ختم ہوئی نہیں کہ میں نے دوڑنا شروع کر دیا تھا۔ زندگی میں Read more about اسمعیل شیخ کی تلاش میں ۔۔۔ ہومین برگوہاتری/ اعجاز عبید[...]

آخری جھوٹ ۔۔۔ گلاب داس بروکر/ اعجاز عبید

(گجراتی)     کتنی حسین ہے وہ؟ بات کرنے کا موقع مل جائے تو مزہ آ جائے۔ نریش گھیا نے اپنے آپ سے کہا۔ اور بات کرنے کے ارادے سے اس نے اپنی طرف بڑھتی ہوئی لڑکی کی طرف مسکرا کر دیکھا۔ اس کے چہرے پر بھی مسکراہٹ تھی۔ وہ کہہ رہی تھی ’’میں آپ Read more about آخری جھوٹ ۔۔۔ گلاب داس بروکر/ اعجاز عبید[...]

ٹھنڈی دیواریں ۔۔۔ گرمکھ سنگھ جیت/ اعجاز عبید

(پنجابی)   ایشور داس نے ایک گھٹن سی محسوس کی۔ مئی کا مہینہ ، بیحد تیز گرمی اور لو۔ اس کا دل گھبرا گیا ۔ اس نے بائیں ہاتھ کے انگوٹھے سے ماتھے پر بہتا ہوا پسینہ پونچھا۔ پھر ہاتھ سے پیٹھ کھجلانے لگا۔ جب اس طرح بھی چین نہ ملا تو بنیان اتار کر Read more about ٹھنڈی دیواریں ۔۔۔ گرمکھ سنگھ جیت/ اعجاز عبید[...]

جنگل ۔۔۔ سچدانند راؤترائے/ اعجاز عبید

(اڑیا)   اس جنگل کا کوئی خاص نام نہیں۔ پورا علاقہ ہی کرمل کہلاتا ہے۔ پھر بھی مقامی لوگ پاس والے حصہ کو بیرینا لتا کہتے ہیں۔ نٹ ور فارسٹ گارڈ بن کر ادھر آیا ہے۔ دو سال میں ہی یہاں اچھی طرح جم کر بیٹھ گیا ہے۔ جنگل کے ٹھیکیدار کے ساتھ اس کی Read more about جنگل ۔۔۔ سچدانند راؤترائے/ اعجاز عبید[...]

علامہ اقبال کی ڈائری کے چند اندراجات ۔۔۔ ڈاکٹر رؤف خیر

ہر بڑا آدمی یاد داشت کے طور پر کچھ اہم نوٹس ایک ڈائری میں لکھتا ہی ہے۔ خاص طور پر سفر کرتے ہوئے تاریخی مقامات کی تفصیلات یا غیر معمولی واقعات اور قابل ترین شخصیات سے ملاقات اور کوائف لکھنا پڑھے لکھے لوگوں کا معمول ہے۔ اس قسم کی یاد داشتیں بعد میں مضمون رپورتاژ Read more about علامہ اقبال کی ڈائری کے چند اندراجات ۔۔۔ ڈاکٹر رؤف خیر[...]

اقبالؒ اور احیائے ملت اسلامی ۔۔۔ طارق محمود مرزا

علامہ اقبالؒ کو مسلمانوں کی عظمتِ رفتہ کا گہرا ادراک و احساس تھا اور اس عظمت کے کھو جانے کا شدید ملال تھا۔ مگر وہ اس پر ماتم نہیں کرتے بلکہ مسلمانوں کو ان کا کھویا ہوا مقام یاد کراتے ہیں اور انہیں یہ مقام پھر سے حاصل کرنے کاولولہ اور حوصلہ دیتے ہیں۔ علامہ Read more about اقبالؒ اور احیائے ملت اسلامی ۔۔۔ طارق محمود مرزا[...]

’اس نے کہا تھا‘: قرأت در قرأت ۔۔۔ رویندر جوگلیکر

ناول کی سنجیدہ قرأت میرے خیال میں ایک پیچیدہ عمل ہے۔ ناقد ہو یا عام قاری، کسی بھی ناول کی قرأت کے دوران زیر مطالعہ ناول کو پڑھنے اور سمجھنے کا ایک نظام ذہن میں ترتیب پاتا چلتا ہے۔ یہ ایک لا شعوری عمل ہے جو ہر ناول کے اپنے متن کی ساخت اور اسلوب Read more about ’اس نے کہا تھا‘: قرأت در قرأت ۔۔۔ رویندر جوگلیکر[...]

چمراسر ناول: ایک تنقیدی محاکمہ ۔۔۔ ڈاکٹر احمد علی جوہر

چمراسر، عہد حاضر کے مشہور فکشن نگار شموئل احمد کا تازہ ترین ناول ہے۔ ناول کا نام ناول کے مرکزی کردار چمراسر کے نام پر رکھا گیا ہے۔ چمراسر، ایک انتہائی حساس، تعلیم یافتہ اور باغی دلت نوجوان کا کردار ہے۔ وہ جے، این، یو، سے سماجیات میں پی،ایچ،ڈی ہے۔ وہ اپنے دلت سماج کے Read more about چمراسر ناول: ایک تنقیدی محاکمہ ۔۔۔ ڈاکٹر احمد علی جوہر[...]

غزلیں ۔۔۔ ڈاکٹر رؤف خیرؔ

ہوتا ہے آہٹوں سے بر آمد کوئی نہیں شاید کوئی ضرور ہے شاید کوئی نہیں   اپنے سوائے بہر خوشامد کوئی نہیں اپنی صدا ہے بر سر گنبد کوئی نہیں   تجھ سے مقابلے کا تو مقصد کوئی نہیں تیرا وجود یار مرا رد کوئی نہیں   بیٹھے ہوؤں میں ٹھیرے ہوئے سوچتا ہے تو Read more about غزلیں ۔۔۔ ڈاکٹر رؤف خیرؔ[...]

غزل ۔۔۔ منصور آفاق

صحبتِ قوسِ قزح کا کوئی امکاں جاناں؟ کوئی دلچسپی، کوئی ربط ِ دل و جاں جاناں؟   میرے اندازِ ملاقات پہ ناراض نہ ہو مجھ پہ گزرا ہے ابھی موسمِ ہجراں جاناں   جو مرے نام کو دنیا میں لیے پھرتے ہیں تیری بخشش ہیں یہ اوراقِ پریشاں جاناں   آ مرے درد کے پہلو Read more about غزل ۔۔۔ منصور آفاق[...]

غزلیں ۔۔۔ ڈاکٹر فریاد آزرؔ

خوبصورت سا بھرم توڑ گیا تھا کوئی دور رہتی تھی کہیں چاند پہ بڑھیا کوئی   لوگ دو گز کے مکانوں میں بھی رہتے ہیں جہاں کوئی دروازہ، نہ آنگن نہ دریچہ کوئی   وہ فراعین ہیں کہ روحِ زمیں کانپتی ہے اور اس عہد میں آیا نہیں موسا کوئی   میں بھی روتا ہی Read more about غزلیں ۔۔۔ ڈاکٹر فریاد آزرؔ[...]

غزلیں ۔۔۔ سحرتاب رومانی

ہو چکا جو بے صدا وہ ساز ہوں دُور سے آتی ہُوئی آواز ہوں   اُس نے بخشا ہے مجھے ایسا کمال بے ہنر ہو کر بھی سر افراز ہوں   غور کر اِس بات پر غصّہ نہ کر جو تجھے حاصل ہے وہ اعزاز ہوں   روز اُڑتا بادلوں کے سنگ تھا آج کل Read more about غزلیں ۔۔۔ سحرتاب رومانی[...]

غزلیں ۔۔۔ محمد صابر

چراغ سے کٹا رہا چراغ پا رہا میں دیر تک بجھا رہا چراغ پا رہا   مجھے مرے سوال کا جواب مل گیا میں اپنی ضد اڑا رہا چراغ پا رہا   مثال دے کے اٹھ گیا میں چاند کی اسے وہ دیر تک جلا رہا چراغ پا رہا   مجھے بھی اس کے درمیاں Read more about غزلیں ۔۔۔ محمد صابر[...]

غزلیں ۔۔۔ اصغرؔ شمیم

ساتھ میرے کوئی بیٹھا دیر تک سن رہا تھا میرا قصہ دیر تک   گرچہ موجوں میں روانی تھی بہت میں لبِ ساحل تھا پیاسا دیر تک   دھوپ نکلی تھی نہ تھا سورج یہاں ساتھ تھا پھر کس کا سایہ دیر تک   آئینہ جب سامنے رکھا گیا تک رہا تھا میرا چہرہ دیر Read more about غزلیں ۔۔۔ اصغرؔ شمیم[...]

غزلیں ۔۔۔ جلیل حیدر لاشاری

نیند میں بھی جاگتا رہتا ہوں میں کس کو اتنا ڈھونڈتا رہتا ہوں میں   سننے والا جب یہاں کوئی نہیں کس سے یونہی بولتا رہتا ہوں میں   جب میرا حصہ یہاں کوئی نہیں اس قدر کیوں بھاگتا رہتا ہوں میں   اس گرانی میں بھی دولت درد کی کتنی سستی بیچتا رہتا ہوں Read more about غزلیں ۔۔۔ جلیل حیدر لاشاری[...]

غزلیں ۔۔۔ سلیمان جاذب

مٹا کر پھر بنایا جا رہا ہے ہمیں کوزہ بتایا جا رہا ہے   وہی کچھ تو کریں گے اپنے بچّے انہیں جو کچھ سِکھایا جا رہا ہے   وہی پانی پہ لکھتے جا رہے ہیں ہمیں جو کچھ پڑھایا جا رہا ہے   ہتھیلی کی لکیریں ہیں کہ جن میں کوئی دریا بہایا جا Read more about غزلیں ۔۔۔ سلیمان جاذب[...]

غزل ۔۔۔ محمد حفیظ الرحمٰن

کیا تُم کو نظر آئے گا اِس شہر کا منظر ہے دھند میں لِپٹا ہوا یہ قہر کا منظر   ہے پیرِ فلک آپ ہی انگشت بدنداں دیکھا ہے جو اِس قریۂ بے مہر کا منظر   اِک سمت ہیں سوکھے ہوئے لب، خشک زبانیں اور دوسری جانب ہے رواں نہر کا منظر   جو Read more about غزل ۔۔۔ محمد حفیظ الرحمٰن[...]

غزلیں ۔۔۔ اشرف

یکایک دل کو دھڑکانے سے پہلے ذرا ٹھہرو! قریب آنے سے پہلے   بلاتے تھے تجھے کس نام سے سب؟ "زمیں کا چاند” کہلانے سے پہلے   نہیں تھی دلکشی موسم میں کوئی تِرے آنچل کے لہرانے سے پہلے   ترا کیا حال تھا سچ سچ بتا اب مِرے جانے کے بعد، آنے سے پہلے Read more about غزلیں ۔۔۔ اشرف[...]

رائیگانی ۔۔۔ نجیبہ عارف

سہ پہر کا وقت تھا اور میں گھر میں اکیلی تھی۔ اچانک گھنٹی بجی۔ میں نے سیڑھیاں اتر کر دروازہ کھولا تو وہ سامنے کھڑی تھی۔ ناٹا قد، چھوٹا سا خوب صورت چہرہ، غیر ملکیوں کا سا۔ اس نے گہرے نیلے رنگ کا سکرٹ پہن رکھا تھا اور سفید چھوٹی قمیض۔ سر پر سیاہ سکارف Read more about رائیگانی ۔۔۔ نجیبہ عارف[...]

آخری خواہش ۔۔۔ نجمہ ثاقب

خادم کو گانا گانے کی عادت تھی۔ مگر خالی خولی عادت سے کہاں کام چلتا ہے۔ گلے میں اگر سر نہ ہو۔ آواز کی لہروں میں محض سیٹیاں بجاتی ہوا بھری ہو تو گانا الٹا گانے والے کے گلے پڑ جاتا ہے۔ مگر خادم کو قدرت نے ایسی آواز بخشی تھی کہ جو ایک مرتبہ Read more about آخری خواہش ۔۔۔ نجمہ ثاقب[...]

پانچ قبریں ۔۔۔ عامر صدّیقی

آج بھی مجھے اچنبھے میں دیکھ کر وہ بوڑھا بول ہی پڑا، ’’یہ پانچ قبریں میرے پانچ دوستوں کی ہیں۔ ان پانچوں کا مجھ پر جو احسان ہے وہ میں کبھی نہیں اتار سکتا، ایسا احسان بھلا کب کسی نے، کسی کے ساتھ کیا۔ اب میرا فرض ہے کہ میں روز ان کی قبروں پر Read more about پانچ قبریں ۔۔۔ عامر صدّیقی[...]

جیلر ۔۔۔ توصیف بریلوی

جیلر بہت عجیب تھا۔ ہوتا بھی کیوں نہ…نو عمری میں ہی عہدہ جو سنبھال لیا تھا۔ اس کی جیل میں ہندو مسلم ہر مذہب و ملت کے قیدی تھے۔ جیل میں اتنے نہاں تہ خانے تھے کہ کب کون سا قیدی آیا اور کب کون گیا کسی کو خبر نہیں ہوتی تھی بلکہ کسی قیدی Read more about جیلر ۔۔۔ توصیف بریلوی[...]

گرہ کشائی ۔۔۔ صالحہ رشید

’’ذیشان بیٹے۔۔۔ جلدی کیجئے۔۔۔ لیٹ ہو جائیں گے آپ‘‘ ’’رحیم چاچا۔۔‘‘ ’’جی۔۔۔ سلام بیگم صاحبہ‘‘ ’’گاڑی نکالئے‘‘ ثروت بیگم کی آواز پر رحیم چاچا نے جلدی سے کار کی چابی سنبھالی اور ایک بار پھر۔۔۔ ’’جی بیگم صاحبہ‘‘ کہتے ہوئے صدر دروازے کی طرف ہو لئے۔ ثروت بیگم نے ذیشان کی ٹائی ٹھیک کی۔ سر Read more about گرہ کشائی ۔۔۔ صالحہ رشید[...]

غضنفر علی تہلکہ ۔۔۔ سلیمان ابراہیم

کہتے ہیں سکندر اعظم نے اپنے دور حکومت میں ہر شعبہ فکر کیلئے وظائف مقرر کیے سوائے شعراء حضرات کے۔ اس بات میں کتنی صداقت ہے یہ یا تو مورخین جانیں یا وہ جنہیں شاعروں سے للہی محبت ہے۔ البتہ اس خبر سے شعراء حضرات کے تنقیص کا پہلو برآمد کرنا نری جہالت ہے۔ ہاں Read more about غضنفر علی تہلکہ ۔۔۔ سلیمان ابراہیم[...]

انتہائے کمال سے گوشۂ جمال تک قسط ۷ ۔۔۔ قرۃ العین طاہرہ

۴ دسمبر، اتوار کے روز نماز فجر کے بعد واپسی تھی تہجد کے وقت مسجد پہنچے۔ اس مرتبہ شدت سے احساس تھا کہ اللہ کے بلاوے پر، اس کی کرم نوازی کے سبب ہم آ تو گئے لیکن حقِ عبودیت بالکل بھی ادا نہ کر سکے، ریاض الجنۃ نوافل کی ادائگی کی طلب سر اٹھاتی Read more about انتہائے کمال سے گوشۂ جمال تک قسط ۷ ۔۔۔ قرۃ العین طاہرہ[...]